زوال:فہیم شناس کاظمی

مکڑی

اک نقطےسے

کام شروع کرتی ہے

سُندر۔۔۔۔۔۔اُجلا۔۔۔۔۔۔دلکش

وہ نقطےکےچارطرف ریشمی جالابنتی ہے

پھرمہکےاُجلےسارےحرف

ساری زباں کھاجاتی ہے

مکڑی زباں کوکھاکے

لبوں کےدرپہ جالابنتی ہے

پھرگھرپہ جالابنتی ہے

پھرشہرپہ جالابنتی ہے

پھرتہذیبیں کھاجاتی ہے

پھر۔۔۔۔۔۔

ماخذ :نظموں کادرکھلتاہے، مرتب: نعمان فاروق

Recommended Posts

Leave a Comment

Jaeza

We're not around right now. But you can send us an email and we'll get back to you, asap.

Start typing and press Enter to search