جسے آنکھوں نے دیکھا تھا کبھی بینائی سے پہلے – احمد جاوید

جسے آنکھوں نے دیکھا تھا کبھی بینائی سے پہلے

ہوا ہوں ہم کلام اُس سے مگر گویائی سے پہلے

 

وہ شعلہ میرے دل کے ساتھ رہتا ہے جسے میں نے

کیاروشن چراغِ حجرۂ تنہائی سے پہلے

 

عراقِ خاک سے آگے ہے سرحد فارسِ جاں کی

مگر وہ سلطنت ملتی نہیں پسپائی سے پہلے

 

بہت ہی غیر ذِمہّ دار ہوں دل کی طرف سے مَیں

رہا خوشحال یہ گھر میری لاپروائی سے پہلے

 

مِرے بھی ایک گھر تھا اور لوگوں کے گھروں ایسا

وہیں دن کٹ رہے تھے خانۂ رسوائی سے پہلے

 

بہت کچھ ملتے جلتے میری حالت سے رہے ہوں گے

زمیں مٹّی سے پہلے آسماں اونچائی سے پہلے

 

ماخذ : روایت

سنِ اشاعت : ۱۹۸۳

مرتب: محمدسہیل عمر

Recommended Posts

Leave a Comment

Jaeza

We're not around right now. But you can send us an email and we'll get back to you, asap.

Start typing and press Enter to search